بنیادی صفحہ / سعودی عرب / آج کے کالمز / بلاول کے بیان کے بعد پی ڈی ایم کے بڑوں میں اچانک رابطے، سیاسی صورتحال پر مشاورت

بلاول کے بیان کے بعد پی ڈی ایم کے بڑوں میں اچانک رابطے، سیاسی صورتحال پر مشاورت

چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو زرداری کے بیان کے بعد پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) میں شامل جماعتوں مسلم لیگ (ن)، پیپلزپارٹی اور جمعیت علمائے اسلام کے سربراہان میں رابطے تیز ہوگئے۔

ذرائع کے مطابق مسلم لیگ ن کے قائد میاں نواز شریف نے مولانا فضل الرحمان سے ٹیلیفونک رابطہ کیا اور اس خواہش کا اظہار کیا کہ اگر یوم یکجہتی کشمیر راولپنڈی کے بجائے آزاد کشمیر میں ہو تو زیادہ بہتر ہوگا۔

اس کے بعد اسی حوالے سے وزیراعظم آزاد کشمیر اور شاہد خاقان عباسی نے مولانا فضل الرحمان سے ملاقات بھی کی جس کے بعد مولانا فضل الرحمان نے اتحاد میں شامل تمام جماعتوں کو اعتماد میں لے کر فیصلہ کیا۔ 

پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ نے 5 فروری کے جلسے کا مقام تبدیل کر دیا ہے اور  اب یوم یکجہتی کشمیر کے موقع پر جلسہ راولپنڈی کی بجائے مظفرآباد میں ہو گا۔

دوسری جانب ذرائع کے مطابق مولانا فضل الرحمان کا سابق صدر آصف علی زرداری سے بھی ٹیلی فونک رابطہ ہوا جس میں آصف زرداری نے وزیر اعظم عمران خان، اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر اور وزیر اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار کے خلاف تحریک عدم اعتماد لا نے پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا۔

دونوں رہنماؤں نے سینیٹ الیکشن مشترکہ طور پر لڑنے کے حوالے سے بھی مشاورت کی جبکہ ذرائع کے مطابق تحریک عدم اعتماد اور سینیٹ الیکشن پر حتمی فیصلہ سربراہی اجلاس میں ہو گا۔ 

مسلم لیگ (ن) کے قائد نواز شریف نے پی ڈی ایم کے سربراہ مولانا فضل الرحمان سے ٹیلی فونک رابطہ کیا۔ 

ٹیلیفونک گفتگو میں حکومت کے خلاف تحریک کی حکمت عملی سمیت اہم امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

نواز شریف سے گفتگو کے فوری بعد مولانا فضل الرحمان نے سابق صدر آصف زرداری کو ٹیلی فون کال کی اور سیاسی صورت حال پر گفتگوکی۔

خیال رہے کہ بلاول نے اپنے بیان میں کہا تھا کہ جلسوں سے نہیں تحریک عدم اعتماد سے حکومت جائے گی۔

تعارف: admin

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*