بنیادی صفحہ / سعودی عرب / آج کے کالمز / کورونا: اسپین اور اٹلی میں ہلاکتوں میں کمی کے بعد لاک ڈاؤن میں نرمی

کورونا: اسپین اور اٹلی میں ہلاکتوں میں کمی کے بعد لاک ڈاؤن میں نرمی

کورونا: اسپین اور اٹلی میں ہلاکتوں میں کمی کے بعد لاک ڈاؤن میں نرمی

کورونا وائرس سے شدید متاثرہ یورپی ممالک اسپین اور اٹلی نے ہلاکتوں میں کمی کے بعد لاک ڈاؤن میں نرمی کی ہے۔

اٹلی کے لیے سب سے خراب صورت حال 28 مارچ کو تھی جب کورونا سے 971 افراد ہلاک ہوئے تھے۔

اٹلی میں اب تک ایک لاکھ 56 ہزار 363 افراد متاثر ہوچکے ہیں جن میں سے 19 ہزار 899 افراد ہلاک ہوئے ہیں جو کہ امریکا کے بعد  دنیا بھر میں سب سے زیادہ اموات ہیں۔

اٹلی میں کتابوں ، اسٹیشنری اور بچوں کے گارمنٹس جیسی کچھ غیر ضروری اشیا کی دکانیں کھولنے کی اجازت دی گئی ہے تاہم فیکٹریاں جو کہ اٹلی کی صنعت کا بنیادی جز ہیں انہیں ابھی تک کھولنے کی اجازت نہیں ملی ہے۔

حکام کے مطابق اٹلی میں لاک ڈاؤن کا یہ سلسلہ 3 مئی تک جاری رہے گا جس کے بعد آئندہ کی صورتحال کے مطابق پالیسی طے کی جائے گی۔

اسپین میں  تعمیراتی اور پیداواری صنعت کیلئے لاک ڈاؤن میں نرمی

دوسری جانب اسپین میں مزید 280 ہلاکتیں رپورٹ ہوئی ہیں جب کہ گذشتہ روز ایسٹر کے موقع پر 619 ہلاکتیں ہوئی تھیں  جوکہ حالیہ دنوں کے مقابلے میں قدرے کم ہیں۔

ہلاکتوں کے حوالے سے اسپین کے لیے بدترین دن 3 اپریل کا تھا جس دن 950 افراد کورونا سے ہلاک ہوگئے تھے۔

اس وقت تک اسپین میں کورونا سے متاثرہ افراد کی تعداد ایک لاکھ 69 ہزار 496 ہوچکی ہے جب کہ 17 ہزار 489 افراد ہلاک ہوچکے ہیں اور اسپین، امریکا اور اٹلی کے بعد دنیا بھر میں اموات کے حوالے سے تیسرے نمبر پر ہے۔

ہسپانوی حکومت نے کورونا کے ساتھ معیشت کے مسائل پر قابو پانے کے لیے لاک ڈاؤن میں کچھ نرمی کی ہے اور آج پیر کے روز تعمیراتی اور پیداواری صنعت سے متعلق افراد کو کام پر جانے کی اجات دی گئی۔

اس کے علاوہ صفائی، سیکیورٹی اور ٹیلی کام کے شعبوں کے ملازمین بھی کام پر لوٹ آئے تاہم ان سب کو مکمل احتیاط اختیار کرنے کی ہدایت کی گئی ہے۔

خیال رہے کہ ان ممالک میں  اشیائے خور و نوش اور میڈیکل اسٹورز پہلے ہی کھلے ہیں تاہم کسی کو بھی غیر ضروری طور پر گھر سے باہر نکلنے کی اجازت نہیں ہے۔

ڈنمارک کا اسکول اور ڈے کیئر سینٹرز کھولنے کا اعلان

ادھر ڈنمارک نے بدھ سے اسکول اور ڈے کیئر سینٹرز کھولنے کا اعلان کردیا ہے۔

ڈینش وزیراعظم کا کہنا ہے کہ ہم چاہتے ہیں کہ پانچویں جماعت تک 11 سال تک کے بچوں کے کام کرنے والے والدین اطمینان کے ساتھ اپنے کام پر جاسکیں، ہمیں اس کی ضرورت ہے کیونکہ بہت سے کام ادھورے رہ گئے ہیں۔

تعارف: admin

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*