بنیادی صفحہ / سعودی عرب / آج کے کالمز / ہمیں بھوک اور کورونا پر قابو پانے کے اقدامات کے درمیان توازن قائم کرنا ہے،وزیراعظم

ہمیں بھوک اور کورونا پر قابو پانے کے اقدامات کے درمیان توازن قائم کرنا ہے،وزیراعظم

وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ  معیشت بحال ہونے تک غریب اور نادار طبقے کی مشکلات بھی بڑھیں گی، عوام کی زندگی کو غیر ضروری خطرے میں ڈالے بغیر ہر اس شعبے میں سہولت فراہم کریں گے جس سے غریب اور سفید پوش افراد کے کاروبار وابستہ ہیں۔

اسلام آباد میں وزیراعظم کی زیر صدارت کورونا وباکی صورتحال پر اجلاس ہوا،معاون  خصوصی برائے صحت ظفر مرزا نے ملک بھر میں متاثرین کے اعدادو شمار، مصدقہ کیسز، جغرافیائی پھیلاؤ سمیت ٹیسٹنگ کی تعداد اور کیسز میں اضافے کے تناسب کے حوالے سے تفصیلی بریفنگ دی۔

 اس موقع پر وزیراعظم کا کہنا تھا کہ  عوام کو لاک ڈاؤن کے ساتھ بھوک اور غربت کے دہرے خطرات کا سامنا ہے، ہمیں بھوک اور کوروناکی عالمگیر وبا پر قابو پانے کے اقدامات کے درمیان توازن قائم کرنے کی ضرورت ہے۔

وزیراعظم کا کہنا تھا کہ ہماری آبادی کو جس قدر خطرہ لاک ڈاؤن سے ہے اس سے کہیں زیادہ بھوک و افلاس ہے ، لاک ڈاؤن کورونا کا علاج نہیں بلکہ عارضی اقدام ہے۔

انہوں نے ہدایت کی کہ موجودہ صورتحال میں پولیس عوام پر سختی کے بجائے دوستانہ رویہ اختیار کرے ۔

 اس موقع پر وزیرِ اعلیٰ پنجاب عثمان بزدار اور وزیر اعلیٰ خیبرپختونخوا محمود خان کا کہنا تھا کہ ٹرانسپورٹ کی بندش سے عام آدمی کا کاروبار اور نقل و حرکت شدید متاثر ہوئی ہے۔

 اجلاس میں آٹو موبائل سیکٹر کے مطالبات بھی وزیراعظم کو پیش کیے گئے جس پر وزیراعظم نے وزیر صنعت کو ہدایت کی کہ ان مطالبات کا جائزہ لیا جائے تاکہ اس حوالے سے فیصلہ کیا جاسکے ۔

خیال رہے کہ ملک بھر میں کورونا سے متاثرہ افراد کی تعداد 36 ہزار سے تجاوز کرچکی ہے جب کہ 788 افراد ہلاک ہوچکے ہیں۔

تعارف: admin

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*