بنیادی صفحہ / اہم خبریں / مارشل لا لگانے کے خواہشمندوں کیلئے بری خبر

مارشل لا لگانے کے خواہشمندوں کیلئے بری خبر

وفاقی وزیر داخلہ احسن اقبال نے کہا کہ آرمی نے چیف جیسے یہ بیان دیا کہ وہ جمہوریت پر یقین رکھتے ہیں ایسے ہی وہ یہ بیان بھی دے دیں کہ اسمبلی دوسری دفعہ بھی اپنی مدت پوری کرے گی اور مقررہ وقت پر انتخابات ہونگے تو اسکے بعد طاہر القادری اور شیخ رشید جیسوں کی دکانیں بند ہوجائیں گی، انہوں نے کہا کہ ہماری 70سالہ تاریخ یہی بتاتی ہے کہ یہاں پر جھاڑی کے پیچھے ہی نہیں گھاسا میں بھی بھوت چھپے ہوتے ہیں،

ہمیں پھونک پھونک کر قدم رکھنے کی ضرورت ہے، ابھی یہاں پر جمہوریت اور جمہوری نظام کیلئے خطرات کا مکمل خاتمہ نہیں ہوا، ملک میں جمہوری نظام کو نقصان پہنچانے کی کوشش کی گئی تو ہم سخت مزاحمت کریں گے۔وہ اتوار کو نجی ٹی وی کو انٹرویو دے رہے تھے ۔ وزیر داخلہ احسن اقبال نے کہا کہ امریکی صدر ٹرمپ پاکستان کو دھمکیاں دے رہا ہے، اسرائیلی وزیراعظم بھارت کے دورے پر تھے پاکستان کی مشرقی سرحد پر بھی حالات سنگین ہیں، جب بیرونی چیلنجزکا سامنا ہو تو ملک کی اندرونی یکجہتی اور زیادہ اہم ہوجاتی ہے۔ بلوچستان میں ایسے واقعات ہوتے ہیں جن میں پر اثرایت کا عنصر نمایاں ہے۔مجھے دوراء بلوچستان کے موقع پر ایم پی ایز نے کہا ہم پر تحریک عوام اعتماد کیلئے دبائو ڈالا جارہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ایسے وقت میں جب ملک دشمن قوتیں فری بلوچستان کی تحریک چلارہی ہیں۔ ایسے وقت میں بلوچستان میں سیاسی کھیل کھیلنا خطرناک عمل ہے۔ ہم معاملات سلجھانے کی کوشش کررہے ہیں۔ احسن اقبال نے کہا کہ آرمی چیف نے بیان دیا کہ وہ جمہوریت پر یقین رکھتے ہیں اگر وہ یہ بیان بھی دے دیں کہ اسمبلی دوسری دفعہ بھی اپنی مدت پوری کرے گی اور مقررہ وقت پر انتخابات ہونگے تو اسکے بعد شیخ رشید جیسوں کی دکانیں بند ہوجائیں گی اور ملک کا مطلع صاف ہوجائے گا۔انہوں نے کہا کہ ہماری 70سالہ تاریخ یہی بتاتی ہے کہ یہاں پر جھاڑی کے پیچھے ہی نہیں گھاسا میں بھی بھوت چھپے ہوتے ہیں۔ ہمیں پھونک پھونک کر قدم رکھنے کی ضرورت ہے۔ اگر ہمارے معاملات اتنے صاف ہوتے تو آج ہم ملائشیااور سنگاپور سے زیادہ ترقی کرچکے ہوتے۔

ہمیں ملک میں سیاسی استحکام قائم رکھنا ہے پھر ہی معشیت ٹیک آف کرسکے گی۔ احسن اقبال نے کہا کہ ابھی یہاں پر جمہوریت اور جمہوری نظام کیلئے خطرات کا مکمل خاتمہ نہیں ہوا۔ملک میں جمہوری نظام کو نقصان پہنچانے کی کوشش کی گئی تو ہم سخت مزاحمت کریں گے۔ کیس بھی سازش کا پتہ اس بات سے چل جائے گا کہ سینٹ انتخابات سے پہلے کے پی کے اور سندھ اسمبلی توڑی جاتی ہے یا نہیں، سازش کا اندازہ اس بات سے بھی ہوجائے گا کہ سینٹ انتخابات شیڈول کے مطابق ہونے دیئے جاتے ہیں یا نہیں۔ وزیر داخلہ نے کہا کہ اگر سینٹ انتخابات اور تمام انتخابات اپنے مقررہ وقت پر ہوتے ہیں تو پھر جمہوری نظام مضبوط ہوگا اور پاکستان میں استحکام آئے گا۔

تعارف: admin

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*