بنیادی صفحہ / اہم خبریں / ہماچل پردیش میں 100 سالہ ووٹر کا ’’سرخ قالین‘‘ استقبال

ہماچل پردیش میں 100 سالہ ووٹر کا ’’سرخ قالین‘‘ استقبال


جمہوری نظام میں اپنے حکمران منتخب کرنے کا اختیار عوام کے ہاتھ میں ہوتا ہے لیکن اکثر لوگ الیکشن والے دن دیگر کاموں میں مصروف رہتے ہیں اور پھر حکومت پر تنقید کرتے ہیں۔

تاہم بھارت میں ایک شہری ایسا ہے جسے ووٹ کا حق استعمال کرنے کی اہمیت کا بخوبی اندازہ ہے اور وہ اپنی ضعیفی اور دشوار گزار راستوں کے باوجود باقاعدگی سے حق رائے دہی استعمال کرنے پہنچتا ہے۔

بھارت کی شمالی ریاست ہماچل پردیش کے ایک گاؤں کلپا کے رہائشی شیام سارن نیگی ایک ریٹائرڈ ٹیچر ہیں جو بھارت کی آزادی کے بعد سے ہونے والے تمام انتخابات میں باقاعدگی کے ساتھ اپنا ووٹ کاسٹ کرتے آئے ہیں۔

اب ان کی عمر 100 برس ہے لیکن پھر بھی حق رائے دہی استعمال کرنے کا ان کا عزم متزلزل نہیں ہوا۔ ہماچل پردیش کے ریاستی انتخابات میں جب وہ ووٹ کاسٹ کرنے آئے تو پولنگ بوتھ پر ان کا ’’سرخ قالین‘‘ استقبال کیا گیا۔

شیام سارن ممکنہ طور پر واحد بھارتی شہری ہیں جنہیں 1947 سے اب تک ہونے والے ہر پارلیمانی و ریاستی انتخابات میں ووٹ کاسٹ کرنے کا اعزاز حاصل ہے۔

ووٹ ڈالنے کے بعد صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے شیام سارن نے بتایا کہ ’’1951 میں بھارت کے پہلے عام انتخابات سے اب تک میں 29 بار حق رائے دہی استعمال کرچکا ہوں‘‘۔

انہوں نے تمام شہریوں پر زور دیا کہ وہ ووٹ دینے کا حق ضرور استعمال کریں تاکہ اچھے لوگ حکومت میں آئیں اور عوام دوست پالیسیاں بنائیں۔

شیام مجموعی طور پر 16 پارلیمانی اور 13 ریاستی انتخابات میں ووٹ ڈال چکے ہیں حالانکہ ان کے گھر سے پولنگ اسٹیشن کا راستہ اکثر برف سے ڈھکا ہوتا ہے۔

ان کے بیٹے سی پی نیگی نے بتایا کہ ان کے والد ضعیف العمری کی وجہ سے زیادہ تر گھر پر ہی رہتے ہیں لیکن انتخابات کے حوالے سے ان کا جذبہ ماند نہیں پڑا، وہ ریڈیو کے ذریعے خود کو ملکی سیاسی صورتحال سے باخبر رکھتے ہیں اور باقاعدگی سے وزیراعظم نریندر مودی کا ماہانہ ریڈیو شو سنتے ہیں۔

تعارف: admin

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*