بنیادی صفحہ / اہم خبریں / کئی امتحانوں میں کامیابی کے بعد ’یقین کا سفر‘ وڈیو ملاحظہ کریں

کئی امتحانوں میں کامیابی کے بعد ’یقین کا سفر‘ وڈیو ملاحظہ کریں

پتر رب دے بندوں نال آسانیاں پیدا کر رب سوہنا تیری بگڑی بنادے گا!

بے شک رحم کرنا رب کی بے شمار صفات میں سے ایک ہے، وہ خالق ہے اور اپنی مخلوق پر بے پناہ مہربان ہے اور جو لوگ الله کی یہ صفت اختیار کرتے ہیں، آپس میں ایک دوسرے سے مہربانی کرتے ہیں، ایک دوسرے کے کام آتے ہیں خدا ایسے لوگوں کو محبوب رکھتا ہے۔

اور بدلے میں اپنی قربت عطا کرتا ہے، اپنی ذات پر یقین عطا کرتا ہے وہ یقین جو انسان کو انسانیت کی معراج پر لے جاتا ہے۔

ایسے ہی موضوع پر بنا پاکستانی ڈرامہ سیریل ’یقین کا سفر‘ آج کل زیر بحث ہے۔

’یقین کا سفر‘ ہمارے معاشرے میں ہونے والے گھناؤنے مظالم، ان کے خلاف ڈٹے رہنے اور خدا کی ذات پر یقین کامل رکھنے کی کہانی ہے۔

پلاٹ:
بیرسٹر عثمان (فرہان علی آغا) کے دو بیٹے دانیال اور اسفند یار ہیں۔ دانیال کی شادی وطن واپسی پر (حرا) سے ہوتی ہے، دانیال پیشے کے لحاظ سے وکیل ہوتا ہے. گھر والوں کے منع کرنے کے باوجود دانیال ایک وزیر کے بیٹے کے خلاف اجتمائی زیادتی کا نشانہ بننے والی لڑکی کا کیس لڑنے کا فیصلہ کرتا ہے۔

اس لڑکی کو انصاف دلانے کی کوشش میں دانیال نہ صرف اپنی زندگی سے ہاتھ دھو بیٹھتا ہے بلکہ منسٹر کے حواری اس پر الزام لگاتے ہیں کہ دانیال کے اپنی اسسٹنٹ کے ساتھ ناجائز تعلقات تھے اس لئے دانیال نے خودکشی کی۔

دوسری جانب اسفند یار اب ایک قابل ڈاکٹر بن چکا ہے۔

اپنے بھائی کی حادثاتی موت اور اپنی ناکام محبت کا دکھ اسفند یار کو کافی ذمےدار بنا دیتا ہے۔ اسفند یار اپنے خاندان کے ساتھ وادی نیلم منتقل ہوجاتا ہے، جہاں وہ ایک بڑا ہسپتال کھولتا ہے۔

اس ڈرامے کا دوسرا اہم کردار زوبیہ (سجل علی ) کا ہے جس کی ماں کی موت کا سبب اس کے باپ کا وحشیانہ رویہ بنتا ہے۔

اپنی ماں کی بےبس موت کے بعد زوبیہ گھٹن کے ماحول سے نجات پانے کے لئے رمیز (اسفندیار کے دوست) سے شادی کرنے کے غرض سے گھر سے بھاگ جاتی ہے۔

تعارف: admin

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*