بنیادی صفحہ / اہم خبریں / ملکی سیاست پر خواتین کو درپیش مشکلات کی وجہ پارلیمنٹ کی کمزوری ہے۔ کشمالہ طارق

ملکی سیاست پر خواتین کو درپیش مشکلات کی وجہ پارلیمنٹ کی کمزوری ہے۔ کشمالہ طارق


سینیئر سیاستدان کشمالہ طارق نے ملکی سیاست پر خواتین کو درپیش مشکلات کی وجہ پارلیمنٹ کی کمزوری کو قرار دیا ہے۔

ڈان نیوز کے پروگرام ‘دوسرا رُخ’ میں گفتگو کرتے ہوئے کشمالہ طارق نے حال میں پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان پر عائشہ گلالئی کے الزامات کا حوالہ دیتے ہوئے کہ خواتین کے ساتھ بدسلوکی اور ہراساں کرنے کے واقعات کوئی نئی بات نہیں اور اگر سیاست کو چھوڑ کر دوسرے اداروں پر نظر ڈالیں تو وہاں بھی ایسے واقعات عام ہوتے جارہے ہیں۔

انھوں نے کہا کہ ‘اگرچہ خواتین کو ہراساں کرنے کے خلاف ایک بل بھی منظور ہوچکا ہے، لیکن بدقسمتی سے اس پر عملدر آمد نہیں ہوا اور نہ ہی خواتین اس سلسلے میں خود آگے آئیں’۔

ان کا کہنا تھا کہ عام طور پر ایسے واقعات میں دیکھنے میں آیا ہے جب کوئی خاتون اپنے حق کے لیے آواز بلند کرتی ہے تو اطراف سے اسی پر الزامات عائد کردیے جاتے ہیں اور بلکل ایسا ہی عائشہ گلالئی کے کیس میں ہوا۔

کشمالہ طارق کا کہنا تھا کہ معاشرے میں عورت کو کمزور سمجھا جاتا ہے اور اسی وجہ سے جس شخص کے پاس طاقت ہوتی ہے اس کے خلاف تحقیقات نہیں کی جاتیں، بلکہ عورت کو ہی قصور وار قرار دیا جاتا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ‘2009 میں جب قومی اسمبلی سے 18ویں ترمیم کی منظوری ہوئی تو میں واحد خاتون تھی جس نے پارٹی سربراہ کو ایک آمر جیسا شخص بنانے سے متعلق شق کی مخالفت میں آواز بلند کی تھی اور ساتھ یہ بھی مطالبہ کیا تھا کہ خواتین کو اسمبلی کی عام نشستوں پر لایا جانا چاہیے’۔

تعارف: admin

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*