بنیادی صفحہ / اہم خبریں / ’یہ نہ پوچھا جائے کہ میں نے استعفیٰ کیوں دیا؛ فرحت اللہ بابر

’یہ نہ پوچھا جائے کہ میں نے استعفیٰ کیوں دیا؛ فرحت اللہ بابر


اسلام آباد: پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) سے تعلق رکھنے والے سینیٹر فرحت اللہ بابر نے سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے دفاع کے دورہ جی ایچ کیو کی مخالفت کرتے ہوئے کمیٹی سے استعفیٰ دے دیا۔

فرحت اللہ بابر نے سینیٹ کمیٹی کے جی ایچ کیو کے دورے کی مخالفت کرتے ہوئے زور دیا کہ پارلیمنٹ کو جی ایچ کیو نہیں جانا چاہیے۔

مزید پڑھیں: فورسز کا زمین پر ’قبضہ‘، سینیٹ کمیٹی تحقیقات کرے گی

پی پی پی کے سینیٹر کا کہنا تھا کہ جی ایچ کیو کو پارلیمنٹ آنا چاہیے جبکہ پارلیمانی ارکان کو جی ایچ کیو نہیں جانا چاہیے۔

فرحت اللہ بابر نے مستعفی ہونے کی وجوہات بتانے سے گریز کرتے ہوئے کہا کہ ’یہ نہ پوچھا جائے کہ استعفیٰ کیوں دیا‘۔

انہوں نے کہا کہ میں کمیٹی کا رکن ہوتا تو بھی جی ایچ کیو نہ جاتا جبکہ پہلے بھی رکن تھا تو جی ایچ کیو نہیں گیا۔

یہ بھی پڑھیں: ملا منصور ہلاکت: سینیٹ کی تحقیقاتی کمیٹی کے دائرہ کار میں توسیع

ان کا کہنا تھا کہ جی ایچ کیو عہدیداروں کو دستاویزات کے ساتھ پارلیمنٹ میں بلایا گیا تو جواب آیا حساس دستاویزات ہیں وہاں نہیں لا سکتے۔

فرحت اللہ بابر نے سوال اٹھایا کہ ’کیا جی ایچ کیو حساس دستاویزات 15 کلومیٹر تک بھی نہیں لا سکتا؟ کیا جی ایچ کیو ان دستاویزات کی 15 کلومیٹر تک بھی حفاظت نہیں کر سکتا؟‘

تعارف: admin

جواب لکھیں

آپ کا ای میل شائع نہیں کیا جائے گا۔نشانذدہ خانہ ضروری ہے *

*